Pakistan’s Muhammad Asif – World Snooker Champion

Pakistan’s Mohammad Asif defeated England’s Gary Wilson in the final to win the IBSF World Snooker Championship on December 3, 2012.

He beat Alex Borg of Malta in the semi-finals on Saturday to become the third Pakistani to play IBSF World Snooker Championship final after Mohammad Yousaf (in 1994) and Saleh Muhammad (in 2003).

کھلاڑیوں کو نوکریاں مل جائیں تو مزید ٹائٹل جیت سکتے ہیں

پاکستان کو اسنوکر کا عالمی چیمپئن بنانے والے محمد آصف کا کہنا ہے کہ فنڈز نہ ہونے سے کافی مشکلات کا سامنا کرنا پڑا، کامیابی کا سارا کریڈٹ والدین کو دیتا ہوں، عالمی ٹائٹل جیتنا میرے لئے

آسان نہیں تھا، کھلاڑیوں کو نوکریاں مل جائیں تو پاکستان مزید ٹائٹل جیت سکتا ہے۔ جیو نیوز کے ساتھ بلغاریہ کے شہر صوفیہ سے ٹیلی فون پر خصوصی گفتگو کرتے ہوئے اسنوکر کے عالمی چیمپئن محمد آصف کا کہنا ہے کہ فنڈز نہ ہونے پر ٹیم کا عالمی ایونٹ میں جانا مشکل تھا، پاکستان بلیئرڈ اینڈ اسنوکر فیڈریشن نے کافی مشکل سے فنڈز کا انتظام کرکے مجھے بھیجا، اللہ کا شکر ہے کہ ورلڈ اسنوکر کا ٹائٹل جیتنے میں کامیاب ہوا۔ انہوں نے کہا کہ ورلڈ چیمپئن شپ جیت کر بہت خوشی ہوئی، پوری قوم کی دعائیں میرے ساتھ تھیں، قوم کا شکریہ ادا کرتا ہوں، ہمیں ورلڈ چیمپئن شپ کیلئے مشکل سے پیسے ملے، اللہ نے مجھے حوصلہ دیا اور میں نے خود کو سنبھالا۔ محمد آصف کا کہنا ہے کہ پروفیشنل اسنوکر کھیلنا اگلا ہدف ہے، جونیئر کھلاڑیوں کو ڈپارٹمنٹ مل جائیں تو انہیں عالمی ایونٹ کیلئے تیار کیا جاسکتا ہے، اس سے آئندہ بھی ورلڈ چیمپئن شپ جیتنے میں مدد ملے گی۔ انہوں نے کہا کہ عالمی ٹائٹل جیتنا میرے لئے آسان نہیں تھا، میں اپنی کامیابی کا سارا کریڈ یٹ اپنے والدین کو دیتا ہوں، آج میں جو کچھ ہوں، و الدین کی دعاوٴں کی بدولت ہوں۔ محمد آصف کا مزید کہنا ہے کہ کھلاڑیوں کو نوکریاں مل جائیں تو پاکستان مزید ٹائٹل جیت سکتا ہے، میرے پاس کوئی پکی نوکری نہیں، کئی جگہ نوکری کی درخواست دی لیکن کوئی جواب نہیں ملا، اسنوکر کا جنون تھا، جس کی وجہ سے اسنوکر جاری رکھی

Leave a Reply